روشنی تیرے جنم یگ پر ایک نظم

intelligent086

TM Star
Nov 10, 2010
1,436
1,289
1,213
Lahore,Pakistan
روشنی تیرے جنم یگ پر ایک نظم


تیری اقلیم محبت میں رکا ہے

اک مسافر بے ارادہ، بے مجال

تجھکو چھو کر

اصل ہونے کی تمنا میں نڈھال

خواب کے اندر بکھرتے خواب کا زخمی ملال

راکھ پر آنکھیں بناتی

انگلیوںکا بے بصر اندھا کمال

دم بدم رنگت بدلتے موسموں کے درمیاں

پھول کھلتی، دھول ملتی خواہشوں کا اندمال

بےعبادت بے دعا ارض و سما کے روبرو

ایک تابیدہ تیقن کو مجسم دیکھنے کی جستجو

لاحاصلی، کار زیاں، امر محال

رینگتی صدیوں، تھکی عمروں کے بوجھل بوجھ میں

تلملاتےماہ و سال

گردآلودہ مسافت ہمسفر مفقود ہے

راستہ بے سمت ہے مسدود ہے

اذن سفر کا کیا سوال

اےمرے عکس جمال

آگہی محدود ہے، تیری ارادت لا زوال

توہمیشہ کے لئے ہے، میں ذرا سا لمحہ بھر کااک خیال

٭٭٭
 
Top
Forgot your password?