دلوں میں نیزے‘ جگر میں خنجر‘ چبھے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے

intelligent086

Super Star
Nov 10, 2010
10,285
10,548
1,313
Lahore,Pakistan
غزل
دلوں میں نیزے‘ جگر میں خنجر‘ چبھے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
ہماری نظروں کے سامنے تن‘ کٹے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
یہ حال غیرت‘ یہ سوزِ ایماں‘ یہ کیف ہستی‘ کہ فربہ ہو کر
عدو کے ہاتھوں‘ گلے ہمارے‘ دبے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
ہمارے نیزوں‘ ہماری ڈھالوں‘ پہ تھا بھروسہ‘ جنہیں ازل سے
ہمارے آگے‘ وہ سربریدہ‘ پڑے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
جنہیں دلاسہ‘ دہائیوں سے‘ وفا کا ہم نے‘ دیا ہوا تھا
وہ خواب آزادیوں کا لے کر مرے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
لکھو مورخ! یہ المیہ کہ جہان بھر کے‘ ستم کدوں میں
ہماری بہنوں کے جسم سارے‘ چھلے ہوئے تھے‘ پر ہم کھڑے تھے
شاعر:- نامعلوم
 
  • Like
Reactions: maria_1

ROHAAN

LOVE IS LIFE
TM Star
Aug 14, 2016
3,784
2,478
513
❤ لاجــــــــــــــــــــــواب ... واااااہ بہت خـــــــــوب ❤
 
Top
Forgot your password?